اسماء کے ڈی این اے ٹیسٹ میچ کر گئے قاتل کی تلاش جاری

0
570


کومتِ پنجاب کا کہنا ہے کہ مردان کی چار سالہ بچی اسما سے جنسی زیادتی کے مجرم کی تلاش کے سلسلے میں خیبر پختونخوا کی پولیس کی جانب سے جو ڈی این اے کے نمونے فراہم کیے گئے تھے ان میں سے ایک بچی کے جسم سے ملنے والے ڈی این اے سے مل گیا ہے۔
ٹوئٹر پر حکومتِ پنجاب کے آفیشل اکاؤنٹ سے کی گئی ٹویٹس کے مطابق ’اسما ریپ کیس کے ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا ہے۔‘
مزید
ٹویٹ میں کہا گیا ہے کہ مذکورہ شخص کا نام ظاہر نہیں کیا جا رہا اور اس سلسلے میں پنجاب حکومت خیبر پختونخوا حکومت سے رابطہ کر رہی ہے۔
ایک اور ٹویٹ میں بتایا گیا ہے کہ پنجاب فورینزک سائنس ایجنسی نے اس معاملے میں 140 سے زیادہ ڈی این اے ٹیسٹ کیے اور یہ کہ بچوں کا استحصال کرنے والوں کو قانون کے تحت مثالی سزا دی جانی چاہیے۔
ادھر پی ایف ایس اے کے ذرائع نے لاہور میں بی بی سی اردو کے نامہ نگار عمر دراز کو بتایا ہے کہ خیبر پختونخوا پولیس کی جانب سے جو 145 نمونے فراہم کیے گئے تھے ان میں دو ایسے نمونے ہیں جو اسما کے جسم سے ملنے والے مواد سے مطابقت رکھتے ہیں۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ دونوں نمونے ایسے افراد کے ہیں جن کی عمر 30 برس سے کم ہے۔ خیبر پختونخوا کے آئی جی کے دفتر کی جانب سے بی بی سی کو بتایا گیا ہے کہ حکومتِ پنجاب کی رپورٹ خیبرپختونخوا حکام کو مل گئی ہے۔
آئی جی کے ترجمان نے بی بی سی اردو کے رفعت اللہ اورکزئی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ رپورٹ ملنے کے بعد مردان میں ملزمان کی گرفتاری کے لیے چھاپے بھی مارے گئے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ اسما کیس کے اُن ملزمان اور مشتبہ افراد جن کے ڈی این اے نمونے پنجاب بھیجے گئے تھے، ان کی کڑی نگرانی کی جا رہی تھی۔ شکریہ بی بی سی اردو

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here